امریکا:ورجینیا بیچ میں فائرنگ سے دو افراد ہلاک اور 8زخمی

واشنگٹن(ا نٹرنیشنل پریس ایجنسی ) امریکہ کی ریاست ورجینیا کے ساحلی علاقے ورجینیا بیچ میں فائرنگ کے واقعات میں دو افراد ہلاک اور 8زخمی ہو گئے ہیں ورجینیا بیچ پولیس کے بیان کے مطابق فائرنگ کا واقعہ رات11 بجے کے قریب پیش آیا فائرنگ سے زخمی ہونے والے افراد کو ہسپتال منتقل کیا گیا تاہم کئی زخمیوں کی حالت تشویش ناک بتائی جا رہی ہے بیان کے مطابق ایک خاتون گولی لگنے سے موقع پر ہی دم توڑ گئی تھیں.
اس سے قبل پولیس چیف پال نیوڈیگیٹ کا کہنا تھا کہ خاتون کی موت ممکنہ طور پر فائرنگ کے سبب نہیں ہوئی جاری کردہ بیان کے مطابق ایک پولیس افسر کو معمولی زخم آئے ہیں پال نیوڈیگیٹ کا کہنا تھا کہ پولیس افسر تحقیقات کے دوران گاڑی کی ٹکر سے زخمی ہوئے انہوں نے کہا کہ جب پولیس افسران تحقیقات کر رہے تھے تو جائے واردات کے قریب ہونے والی فائرنگ کی وجہ سے افسر نے ایک شخص پر گولی چلائی جس سے اس کی موت واقع ہوئی .
پولیس حکام کا موقف ہے کہ افسر نے صورت حال کا سامنا کرتے ہوئے گولی چلائی جو ایک شخص کے لیے جان لیوا ثابت ہوئی گولی چلانے والے افسر کو انتظامی رخصت پر بھیج دیا گیا ہے جو کہ گزشتہ پانچ برس سے ادارے کے ساتھ وابستہ تھے اور اسپیشل آپریشن ڈویڑن کے ساتھ کام کر رہے تھے بیان کے مطابق لوگوں کے زخمی ہونے اور ہلاکت کے ساتھ ساتھ افسر کی طرف سے کی گئی فائرنگ کی بیک وقت تحقیقات ہو رہی ہیں پال نیوڈیگیٹ کے مطابق کسی بھی مشتبہ شخص کے بارے میں معلومات دستیاب نہیں ہیں اور متعدد افراد کو تحویل میں لیا گیا ہے.
ادھر وائٹ ہاﺅس کی پریس سیکرٹری جان ساکی نے تصدیق کی ہے کہ صدر بائیڈن ملک کے اندر اسلحے پر کنٹرول کے لیے ایک صدارتی حکم نامہ جاری کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں پریس بریفنگ کے دوران انہوں نے کہا کہ اس مسئلے پر نظر ثانی کے عمل کے سبب ایگزیکٹو آرڈر کا نظام الاوقات ابھی واضح نہیں ہے جین ساکی کا کہنا تھا کہ صدر بائیڈن جب اوباما انتظامیہ میں نائب صدر کے طور پر فرائض انجام دے رہے تھے تو انہوں نے اسلحے سے در پیش تشدد سے نمٹنے کے لیے 23 صدارتی اقدامات کے تعین میں معاونت کی تھی.
انہوں نے کہاکہ یہ ایک ہتھیار ہے جو ہم استعمال کر سکتے ہیں اور کوئی بھی وفاقی حکومت، کوئی بھی صدر اس کے ذریعے بندوق سے پھیلنے والے تشدد سے نمٹ سکتا ہے اور ملک بھر میں شہریوں کے تحفظ کو یقینی بنا سکتا ہے وائٹ ہاﺅس کی پریس سیکرٹری نے کہا کہ کہ صدر یہ یقین رکھتے ہیں کہ یہ ایک موقع بھی ہے کہ وہ اس مسئلے پر کانگریس کو شامل رکھیں ان کے مطابق پہلے ہی دو بل کانگریس میں موجود ہیں جن میں سے ایک اسلحہ خریدنے والے کے پس منظر کی جانچ پڑتال سے متعلق ہے اور دوسرا اسلحے پر پابندی اور اس کی فروخت سے متعلق قانون سازی سے متعلق ہے.
جین ساکی نے بتایا کہ صدر بائیڈن سمجھتے ہیں کہ اس مسئلے کے حل کے لیے ریاستوں کو ساتھ لے کر چلنا ایک بہترین اقدام ہے اسلحے پر کنٹرول کے بارے میں گزشتہ دو برسوں میں کافی پیش رفت دیکھی گئی ہے اور پہلے ہی 20 ریاستوں نے اسلحہ خریدنے والے کے بیک گراﺅنڈ چیک کا دائرہ وسیع کر دیا ہے اور سات ریاستوں نے اسلحے پر پابندی لگا دی ہے سو قومی سطح پر اس مسئلے سے نمٹنے کی ضرورت ہے.
ڈیموکریٹس گن کنٹرول سے متعلق نئی کوششیں ایسے موقع پر کر رہے ہیں جب گزشتہ ہفتے ایک حملہ آور نے کولوراڈو کے علاقے بولڈر میں ایک گراسری اسٹور پر فائرنگ کر کے 10 افراد کو ہلاک کر دیا تھا اسی طرح گزشتہ ہفتے ایک مسلح شخص نے اٹلانٹا میں مساج پارلرز پر حملہ کر کے آٹھ افراد کو ہلاک کر دیا تھا امریکہ میں گن کنٹرول سے متعلق حالیہ رپورٹس کے مطابق وائٹ ہاﺅس اس بارے میں بھی غور کر رہا ہے کہ گھریلو ساختہ بندوقیں جن پر کوئی سیریل نمبر کنندہ نہیں ہوتا، ان کے رکھنے کے لیے بھی بیک گراﺅنڈ چیک کو لازم قرار دیا جائے اور اگر کوئی شخص اپنے بیک گراﺅنڈ کی وجہ سے بندوق خریدنے کا اہل قرار نہ پائے تو اس کے بارے میں مقامی پولیس کو بھی مطلع کیا جائے.

اپنا تبصرہ بھیجیں