38

انصاف کے نظام اور نہ ملکی محافظوں نے اسحاق ڈار کا راستہ روکا: عمران خان

پشاور: (نیوز ڈیسک) پاکستان تحریک انصاف کے چیئر مین اور سابق وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ نامزد وزیر خزانہ اسحاق ڈار این آر او اور ڈیل کے تحت پاکستان پہنچے ہیں۔ نہ انصاف کے نظام اور نہ ملک کے محافظوں نے اس کا راستہ روکا۔ شریف فیملی پیسے بنانے کیلئے چوری سے مشینری امپورٹ کر رہی ہے۔

انصاف سٹوڈنٹس اور یوتھ کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے سابق وزیراعظم نے کہا کہ نوجوان مستقبل کے لیڈر ہیں، لا الہ الااللہ میری طاقت ہے۔ حقیقی آزادی کے لیے پوری قوم کو نکالوں گا، امید ہے یہ آخری مارچ ہوگا، اس کے بعد امپورٹڈ حکمرانوں کو گھرجانا ہو گا، ہم کسی سے خوفزدہ نہیں، ظالم بزدل ہوتا ہے۔

پی ٹی آئی چیئر مین کا کہنا تھا کہ جب قوم نکلے گی تو چوروں کو چھپنے کا موقع نہیں ملے گا۔ ہم مکمل منصوبہ بندی کے ساتھ آزادی کے لیے نکلیں گے۔ امپورٹڈ وزیر داخلہ کی کوئی تدبیر اس کے کام نہیں آئے گی۔ ایک خود دار قوم دوستی سب سے کرتی ہے مگر اللہ کے سوا کسی کے سامنے نہیں جھکتی۔

ملک کے محافظ بننے والے بھی ’اسحاق ڈار‘ کو نہ روک سکے

اس سے قبل علماء و مشائخ کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے تحریک انصاف کے چیئرمین نے کہا ہے کہ اسحاق ڈار این آر او اور ڈیل کے تحت پاکستان پہنچے ہیں۔ نہ انصاف کے نظام اور نہ ملک کے محافظوں نے اس (اسحاق ڈار) کا راستہ روکا۔ ہماری بڑی بدقسمتی ہے کہ ہمارا نہ انصاف کا نظام ان کو روک سکا اور نہ ہمارے وہ لوگ جو ملک کے محافظ بنتے ہیں نہ انہوں نے اس کا راستہ روکا اور کون روکے گا انشااللہ آپ کا بھائی عمران خان اس کا راستہ روکے گا۔

انہوں نے کہا کہ ان کا منشی جو وزیراعظم کے جہاز پر بیٹھ کر بھاگ گیا تھا، آج ملک کا وزیر خزانہ بننے جا رہا ہے۔ جس معاشرے میں قانون کی حکمرانی اور انصاف نہ ہو وہ جانوروں کا معاشرہ ہوتا ہے۔ مغرب میں یہ تصور نہیں کہ ایک مفرور اور مجرم باہر بیٹھ کر ملک کے فیصلے کرے۔

عمران خان نے حکومت پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ ’یہ آپ کی خدمت کرنے نہیں آئی بلکہ اپنے کیسز ختم کرنے آئی ہے۔ چھ مہینے پہلے چھ فیصد پر معیشت ترقی کر رہی تھی آج وہ ترقی نیچے آگئی ہے۔ 50 سال میں سب سے زیادہ مہنگائی پاکستان میں آئی ہے۔

شریف فیملی پیسے بنانے کیلئے چوری سے مشینری امپورٹ کر رہی ہے

پشاور میں تاجر کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے پاکستان تحریک انصاف کے چیئر مین کا کہنا تھا کہ جو پاکستان کے ساتھ ہوا وہ کوئی دشمن بھی نہیں کر سکتا تھا،سترہ سال بعد اکنامک سروے کے مطابق پاکستان میں 6 فیصد گروتھ ہو رہی تھی، ایکسپورٹ پر توجہ دینے والے ممالک ہم سے آگے نکل گئے،جب سے دومافیا خاندان آئے بھارت،بنگلا دیش پاکستان سے آگے نکل گئے،60کی دہائی میں غریب ممالک پاکستان کے ماڈل کو فالو کرتے تھے،جب سے یہ دوخاندان آئے ملک مقروض اور یہ امیر ہوتے گئے، 60کی دہائی میں ملک کی انڈسٹریزتیزی سے بڑھ رہی تھی،پہلی دفعہ ہماری حکومت میں انڈسٹریزمیں11فیصد اضافہ ہوا۔

انہوں نے کہا کہ کورونا کے باوجود ہماری ایکسپورٹ بڑھ رہی تھی،کورونا کے باوجود معاشی حالات بہتر ہو رہے تھے، ہمارے دورمیں ریکارڈ 32 ارب ڈالر ایکسپورٹ تھی،ہمارے دورمیں ریکارڈ ٹیکس اکٹھا کیا گیا، ملک آگے بڑھ رہا تھا اس دوران بیرونی سازش کے تحت چوروں کومسلط کیا گیا، آج پاکستان میں پچاس سالہ مہنگائی کے ریکارڈ ٹوٹ گئے ہیں، ہمارے دورمیں16روپے فی یونٹ آج 45 روپے تک پہنچ گیا،تنخواہ دارطبقے کے لیے قیامت آچکی ہے،میرا سوال ہے کونسی قیامت آئی تھی اب ملک میں ہر چیزمہنگی ہو گئی، عالمی مارکیٹ میں آج گھی کی قیمتیں کم ہو چکی ہیں،ہمارے دور میں 55 روپے اور آج 120 روپے کلوتک چلا گیا، ہمارے دور میں 100 روپے اور آج چاول 220 فی کلو ہوگیا،فیصل آباد میں 20 فیصد انڈسٹریز بند ہو چکی ہے، ہمارے دورمیں فیصل آباد میں انڈسٹریزچل رہی تھی مزدورنہیں مل رہے تھے۔

سابق وزیراعظم کا کہنا تھا کہ خیبرپختونخوا کے تاجروں کوحقیقی آزادی کی تحریک میں شامل کرنے آیا ہوں،اپنے بچوں کے مستقبل کے لیے میری کال کا انتظارکرنا ہے،نمبرون بھگوڑا بیماری کا جھوٹ بول کر باہر گیا، نوازشریف نے میڈیکل رپورٹ میں بھی دو نمبری کی ہوئی تھی،یہ کوئی بھی کام ایمانداری سے نہیں کرتے،نوازشریف کی بیٹی سیدھی منہ سے جھوٹ بولتی ہیں،یہ سارے چورملک کا پیسہ لوٹ کر باہر بھاگ جاتے ہیں،این آر او ڈیل ہوتی ہے تو ملک میں پھر واپس آ جاتے ہیں،شہبازشریف چیری بلاسم کی آڈیوٹیپ آئی ہے، شہبازشریف بھارت سے مریم نوازکے داماد کے لیے مشینری منگوارہا ہے۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ نواز شریف کی بیٹی مریم نواز نے جھوٹ بولنے میں پی ایچ ڈی کی ہوئی ہے، پیسہ لوٹتے ہیں باہر چلے جاتے ہیں این ار او لیتے ہیں پھر آ کر لوٹتے ہیں، یہ صرف پیسے بنانے کے لیے چوری سے مشینری امپورٹ کر رہے ہیں، ابھی آڈیو لیکس میں اور چیزیں بھی سامنے آئینگی،ان کے خلاف پاکستانی قوم نے میرے ساتھ ہونا ہے، جب تک زندہ ہوں ان کا مقابلہ کرونگا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں