35

پا ئلٹ کے غرور نے 97 جانیں لے لیں، کراچی طیارے حادثے میں زندہ بچنے والے مسافر کے انکشافات

اسلام آباد (جنرل رپورٹر) پی آئی اے کے طیارے کے حادثے میں بچ جانے والے دو افراد میں سے ایک بینک آف پنجاب کے چیف ایگزیکٹو آفیسر ظفر مسعود کا کہنا ہے کہ اگر پائلٹ نے ائیر ٹریفک کنٹرولر کی بات مان لی ہوتی، واپسی اور لینڈنگ کے لیے لبما روٹ اختیار کر لیا ہوتا تو یہ المیہ پیش نہ آتا۔جنگ اخبار کی رپورٹ کے مطابق انہوں نے مزید کہا کہ میرا خیال ہے کہ اللہ نے فیصلہ کر لیا ہو گا کہ یہ میرے جانے کا وقت نہیں اور میں زندہ بچ جاو ¿ں گا۔
حادثے کے بعد زندگی کے بارے میں میرا تصور بدل گیا۔میں معجزوں پر یقین کرنے لگا ہوں اور میرا اللہ پر ایمان مضبوط ہوا ہے۔اس دن سب کچھ تیز سے ہو رہا تھا۔لگتا تھا کوئی بڑا واقعہ ہونے والا ہے۔میں جلدی نہیں اٹھتا لیکن اس دن الارم سے ایک گھنٹہ پہلے ائیرپورٹ پہنچ گیا۔
حالانکہ میں ہمیشہ عین وقت پر ہی پہنچتا تھا۔میری ایک اور فلائٹ کی بکنگ تھی جو گیارہ بجے روانہ ہونا تھی لیکن پھر میں نے پی آئی اے کی ایک بجے کی فلائٹ کا فیصلہ کیا تاکہ دو گھنٹے مزید دے سکوں۔
میں دیر تک سوئے رہنے کی عادت کی وجہ سے بدنام ہوں۔انہوں نے مزید کہا کہ اس نے نوے منٹ کی پرواز بہت اچھی رہی۔لینڈنگ بھی معمول کے مطابق ہو رہی تھی کہ طیارہ رن وے پر تین مرتبہ اچھلا اور دوبارہ ٹیک آف کر لیا، یہ بہت غیر معمولی تھا،کم ازکم مجھے کبھی اس کا تجربہ نہ ہوا۔پائلٹ طیارے کو تین ہزار فٹ اوپر لے گیا او دوبارہ لینڈنگ کی کوشش کی۔انجن فیل ہو گیا اور ہونی ہو کر رہی،اس ساری صورتحال کی تصویر کشی مشکل ہے،اس حادثے نے اپنے خالق اور اس کے معجزوں پر میرے ایمان کو مضبوط کیا،میری سیٹ 50 فٹ کی بلندی سے ایک عمارت کی چھت پر گری۔
وہاں سے اچھل کر وہ بالکل سیدھی گلی میں کھڑی ایک کارکے ہڈ پر آ گری،اگر سیٹ ٹیڑے زاوئیے سے یا الٹ کر گرتی تو میرے سارے اعضائ ٹوٹ گئے ہوتے، ظفر مسعود نے مزید کہا کہ غرور اور تکبر مہلک ہیں، ہمیں انہیں نکال کر باہر پھینکا ہو گا۔یہ پائلٹ کا غرور تھا جس نے 97 جانیں لے لیں۔اس نے ائیر ٹریفک کنٹعولر کی بات مان لی ہوتی، واپسی اور لینڈنگ کے لیے لمبا روٹ اختیار کر لیا ہوتا تو یہ المیہ پیش نہ آتا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں