36

بلاول لانگ مارچ میں دھرنا دینے اور مریم نواز تحریک عدم اعتماد پر رضامند ہو گئیں

لاہور (ا ±بیورو رپورٹ) : چئیرمین پاکستان پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری لانگ مارچ میں دھرنا دینے جبکہ مسلم لیگ ن کی مرکزی نائب صدر مریم تحریک عدم اعتماد پر رضامند ہو گئی ہیں۔ گذشتہ روز جاتی امرا میں بلاول بھٹو زرداری اور مریم نواز کی ملاقات کی اندرونی کہانی سامنے آ گئی ہے۔ قومی اخبار میں شائع رپورٹ کے مطابق بلاول اورمریم کی ملاقات میں حکومت مخالف تحریک کو تیز کرنے پر بھی اتفاق کیا گیا ، سینٹ الیکشن میں جوڑتوڑ پر مشترکہ حکمت عملی تیار کی گئی ، مریم نوازنے جواب میں کہا کہ تمام باتوں کا حتمی فیصلہ نوازشریف کریں گے۔
بلاول بھٹو کا کہنا تھا کہ سیاسی لشکرلے کراثرانداز نہیں ہورہے ،جائزحکومتوں کواپنا ٹائم پورا کرنا چاہئیے ،ملک پرسلیکٹڈ نظام مسلط ہے ،حکومت کو کیسے ہٹانا ہے فیصلہ پی ڈی ایم کرے گی۔
مریم نواز کے ساتھ سینٹ الیکشن پر تفصیلی تبادلہ خیال کیا ، خورشید شاہ اور شہباز شریف کو رہا کیا جائے۔ مریم نے کہا کہ یوسف رضا گیلانی ہمارے مشترکہ امیدوار ہیں، ان کی حمایت کرر ہے ہیں ،عمران خان عوام کامجرم ہے ، ان کی پارٹی کے اندر ہر صوبے میں بغاوت ہوچکی ہے۔

یاد رہے کہ گذشتہ روز الیکشن کمیشن نے این اے 75 ڈسکہ سے متعلق بھی فیصلہ سنایا اور الیکشن کالعدم قرار دیتے ہوئے 18 مارچ کو دوبارہ الیکشن کا حکم دے دیا تھا۔ الیکشن کمیشن کے فیصلے پر مریم نے گذشتہ روز ایک ویڈیو پیغام جاری کیا جس میں انہوں نے کہا کہ اللہ کا ڈسکہ کے عوام کا حق انکو واپس مل گیا،جعلی صادق و امین کو ووٹ چور کی سند جاری ہوگئی، بکسہ چوری کی تصدیق بھی ہوگئی۔ جبکہ ٹویٹر پر مریم نواز نے اپنے پیغامات میں کہا ری پولنگ سے بڑے سوال ابھی باقی ہیں کہ یہ سازش کہاں تیار ہوئی؟ الیکشن کمیشن کے فیصلے پر لیگی رہنما محمد زبیر نے کہا کہ اب ہمیں بتایا جائے دھاندلی میں کون ملوث تھا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں