چین نے عالمی تجارتی تنظیم میں شمولیت کے بعد اپنے تمام وعدوں کو پورا کیا ہے،چینی وزارت تجارت

ہم نے ڈبلیو ٹی او کے تحت چین کی ذمہ داریوں کو مکمل طور پر پورا کیا ہے اور اپنے وعدے بھی پوری طرح نبھائے ہیں،بیان

بیجنگ (انٹرنیشنل ڈیسک) چین کے نائب وزیر تجارت وانگ شو وین نے ریاستی کونسل کی ایک پریس کانفرنس میں چین کی تجارتی پالیسی کے حوالے سے عالمی تجارتی تنظیم کے آٹھویں جائزے پر روشنی ڈالی۔ میڈیارپورٹس کے مطابق وانگ شو وین،جو چین کے بین الاقوامی تجارتی مذاکرات کے نائب نمائندے بھی ہیں، نے بتایا کہ رواں سال ڈبلیو ٹی او میں چین کی شمولیت کو بیس سال ہوچکے ہیں۔
ہم نے ڈبلیو ٹی او کے تحت چین کی ذمہ داریوں کو مکمل طور پر پورا کیا ہے اور اپنے وعدے بھی پوری طرح نبھائے ہیں۔ڈبلیو ٹی او کے کئی سربراہان اور اکثریتی ممبران نے اس حوالے سے چین کی کاوشوں کو سراہا ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ ڈبلیو ٹی او میں شمولیت کے بعد ہم نے ٹائم ٹیبل کے مطابق اپنے قوانین، ضوابط اور پالیسی کو ڈبلیو ٹی او کے قوانین کے مطابق ترتیب دیا ہے۔
دوم، مصنوعات کے میدان میں ہم نے ٹیرف کو 9.8 فیصد تک کم کرنے کا وعدہ کیا تھا۔ اس قت چین کے درآمدی محصولات کی مجموعی سطح صرف 7.4فیصد ہے، جو تمام ترقی پذیر ارکان سے کم اور ترقی یافتہ ارکان کے معیار کے قریب ہے۔سوم، ہمارے قوانین، ضوابط، اور پالیسیاں عمل درآمد کے اعتبار سے ڈبلیو ٹی او کے قوانین کے مطابق ہیں اور ہم نے ان اصول و ضوابط کی بھرپور انداز میں پاسداری کی ہے۔چین نے ڈبلیو ٹی او کے تنازعات کے تصفیہ میکانزم کے تحت مخصوص کیسز پر کیے گئے فیصلوں پر سختی سے عمل کیا ہے۔مذکورہ پہلوؤں سے دیکھا جا سکتا ہے کہ چین نے ڈبلیو ٹی او میں شمولیت کے بعد اپنے وعدوں کو صحیح معنوں میں پورا کیا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں