اچھرہ سے11 اور 12سالہ بچیوں کا مبینہ اغوا، آئی جی کا فوری بازیابی کا حکم

پولیس کی اغواء کی درخواست پر بچیوں کی بازیابی کیلئے قانونی کاروائی شروع، بازیابی کیلئے ٹیم تشکیل دی بچیوں کو جلد بازیاب کر لیں گے۔ ڈی آجی آپریشنز سہیل چودھری

لاہور(بیورو رپورٹ) لاہور کے علاقہ اچھرہ میں 11 اور 12 سالہ بچیوں کو مبینہ طور پر اغوا کرلیا گیا۔ تفصیلات کے مطابق اہلخانہ نے بچیوں کے اغواء کی تھانہ اچھرہ میں درخواست دے دی، پولیس نے بچیوں کی بازیابی کیلئے کاروائی شروع کردی ہے۔ آئی جی پنجاب نے ڈی آجی آپریشنز کو فوری طور پر بچیوں کی بازیابی کا حکم دے دیا ہے۔
ڈی آجی آپریشنز سہیل چودھری کا کہنا ہے کہ بچیوں کو جلد بازیاب کر لیں گے بچیوں کی بازیابی کے ٹیم تشکیل دیدی ہے۔ مزید برآں تھانہ ملت ٹاؤن میں مقدمہ کا اندراج کرواتے ہوئے چک نمبر 120 ج ب کی رہائشی مجیداں بی بی نامی خاتون نے پولیس کو بتایا اسکی 20 سالہ بیٹی شہنیلا گھر سے دوائی لینے لاثانی پُلی گئی جسے راستے میں ملزم شاہ زیب اور اسکے دیگر ساتھیوں کی جانب سے اسلحے کے زور پر مبینہ طور پر زبردستی اغوا کر لیا گیا جس کے اغوا کا مقدمہ درج کرلیا گیا۔

تھانہ صدر جڑانوالہ میں مقدمہ کا اندراج کرواتے ہوئے چک نمبر 72 گ ب کے رہائشی محمد رفیع نامی شہری نے پولیس کو بتایا کہ ملزم طلحہ اور اس کے نامعلوم ساتھی اسکی 12 سالہ بیٹی (س)کو مبینہ طور پر زبردستی اپنے ساتھ جانوروں کی حویلی میں لے گئے جہاں اسلحہ کے زور پر مبینہ طور پر زیادتی کا نشانہ بنا دیا جس پر پولیس نے ملزموں کے خلاف مقدمہ درج کرلیا ہے۔
اسی طرح تھانہ ڈجکوٹ کی حدود میں بھی دو شادی شدہ خواتین سمیت 3 خواتین کو مبینہ طور پر اغوا کے بعد زیادتی کا نشانہ بنا دیا۔ تھانہ ڈجکوٹ کے علاقے چک نمبر 297 رب کے رہائشی سید جاوید اقبال نامی شہری نے مقدمہ کا اندراج کرواتے ہوئے پولیس کو بتایا کہ ملزم ندیم اقبال نے اس کی اہلیہ (م)کو مبینہ طور پر اغوا کے بعد زیادتی کا نشانہ بنا دیا۔تھانہ مظفرآباد کے علاقے بلال پارک کے رہائشی محبوب حسین کی 18 سالہ بیٹی (م)کو ملزم سنی نے جبکہ تھانہ مدینہ ٹاؤن کے علاقے چک نمبر 208 لے کے رہائشی ساجد نامی شہری کی اہلیہ (م) کو ملزم ساجد مسیح نے مبینہ طور پر گھر سے اغواکے بعد زیادتی کا نشانہ بنا دیا۔ پولیس نے ملزموں کیخلاف مقدمہ درج کرتے ہوئے کارر وائی شروع کر دی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں