14

چیئرمین ایف بی آر سے کارپٹ مینو فیکچررز اینڈ ایکسپورٹرز ایسوسی ایشن کے وفد کی ملاقات

ْطورخم بارڈر کے راستے آنے والے جزوی تیار خام مال پرعائد ٹیکسز میں چھوٹ کا مطالبہ پیش کیا

اسلام آباد/لاہور(حالات نیوز ڈیسک) چیئرمین فیڈرل بورڈ آف ریو نیو ڈاکٹر اشفاق احمد سے پاکستا ن کارپٹ مینو فیکچررز اینڈ ایکسپورٹرز ایسوسی ایشن کے تین رکنی وفد نے ملاقات کر کے طورخم بارڈر کے راستے آنے والے جزوی تیار خام مال پرعائد ٹیکسز میں چھوٹ کا مطالبہ پیش کرنے سمیت دیگر مسائل سے آگاہ کیا ۔تفصیلات کے مطابق پاکستان کارپٹ مینو فیکچررز اینڈ ایکسپورٹرز ایسوسی ایشن کے قائمقام چیئرمین ریاض احمد کی سربراہی میں سینئر مرکزی رہنما عبد اللطیف ملک اور عثمان اشرف نے چیئرمین فیڈرل بورڈ آف ریو نیو ڈاکٹر محمد اشفاق سے ملاقات کر کے ہاتھ سے بنے قالینوں کی صنعت کو درپیش مسائل کے حوالے سے تبادلہ خیال کیا ۔
وفد کی جانب سے چیئرمین ایف بی آر کو آگاہ کیا گیا کہ برآمدی مصنوعات کو سیلز ٹیکس سے استثنیٰ حاصل ہے جبکہ طورخم کے راستے افغانستان سے آنے والا جزوی تیار مال بھی مقامی سطح پر ویلیو ایڈیشن کے بعد برآمد کر دیاجاتا ہے لیکن اس پر مختلف ٹیکسز عائد ہیں جس کی وجہ سے پیداواری لاگت میں کئی گنا اضافہ ہو گیا ہے۔

اس حوالے سے بار ہا درخواستیں کر چکے ہیںلیکن شنوائی نہ ہونے پر مینو فیکچررز اور ایکسپورٹرز میں شدید تشویش پائی جاتی ہے ۔

قائمقام چیئرمین ریاض احمد کے مطابق چیئرمین ایف بی آر ڈاکٹر اشفاق احمد کے ساتھ ہونے والی ملاقات انتہائی مثبت رہی ہے اورہمیں امید ہے کہ ہمارے مطالبے کو زیر غور لا کر اس پر جلد سے جلد پیشرفت کی جائے گی ۔ انہوںنے کہا کہ اس فیصلے سے پاکستان میں کم و بیش 5لاکھ ہنر مندوں کے روزگار کو تحفظ حاصل ہوگا جبکہ پیداواری لاگت کم ہونے سے عالمی منڈیوں میں حریف ممالک کی مصنوعات سے مقابلہ کی وجہ سے ہماری برآمدات میں اضافہ ہوگا ۔
ٹیکسز سے چھوٹ ملنے کی وجہ سے پاکستان میں ہاتھ سے بنے قالینوں کی صنعت کو استحکام سے افغانستان میں جزوی خام مال تیار کرنے والے غریب ہنرمندوں کو بھی روزگار کے مواقع میسر رہیں گے ۔انہوں نے کہا کہ حکومت سے مطالبہ ہے کہ ہمارے مطالبات کو سنجیدگی سے لے بصورت دیگر برآمدات مزید تنزلی کا شکار ہو جائیں گی ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں