وفاقی پولیس نے قبضہ مافیا کے خلاف کریک ڈاو¿ن میں مزید بہتری کے لئے نیا ایس او پی جاری کر دیا

اسلام آباد( حالات میڈیا ڈیسک) وفاقی پولیس نے قبضہ مافیا کے خلاف کریک ڈاو¿ن میں مزید بہتری کے لئے نیا ایس او پی جاری کر دیا، ایس او پی کے تحت قبضہ مافیا کے خلاف تمام کارروائیاں ایس ایس پی آپریشنز کی زیر نگرانی ہوں گی، اسلام آباد سے شہریوں کی جائیداد پر ناجائز قبضہ کرنے والے شرپسند عناصر کا قلع قمع کر کے دم لیں گے، آئی جی اسلام آباد قاضی جمیل الرحمان
تفصیلات کے مطابق اسلام آباد پولیس نے قبضہ مافیاکے خلاف کارروائیوں کے لئے نیا ایس او پی جاری کر دیا ہے جس کے مطابق قبضہ اسلام آباد میں قبضہ مافیا کے خاتمہ کے لئے ایک نئی حکمت عملی ترتیب دی گئی ہے، قبضہ مافیا کے خلاف کریک ڈاو¿ن کے لئے ایس ایس پی آپریشنز اسلام آباد کی سربراہی میں ایک اینٹی لینڈ گریبنگ یونٹ قائم کیا گیا ہے جو ریسکیو ون فائیو پر موصول ہونے والی کسی بھی شکایت پر فوری حرکت میں آتا ہے، اسلام آباد پولیس کے نئے ایس او پی کے مطابق اگر کوئی قبضہ مافیا گروپ یا اس کا کوئی کارندہ کسی شخص کی منقولہ و غیر منقولہ جائیداد پر قبضہ کرنے کی کوشش کرتا ہے تو ایسی صورتحال میں ڈیوٹی پر مامور پولیس افسر اور شکایت کنندہ کو کیسے اور کس کو رپورٹ کرنی ہوگی، ایس او پی کے مطابق اگر کسی کی اراضی یا تعمیر شدہ گھر پر غیر قانونی قبضہ کی کوشش کی جارہی ہو تو متاثرہ شخص اس کی اطلاع فوری طو ر پرریسکیو 15پر دے گا اور ریسکیو ون فائیو کا عملہ فی الفور بذریعہ فون /وائرلیس متعلقہ ایس ڈی پی او اور ایس ایچ او کو اطلاع فراہم کرنے کا پابند ہوگا قبضہ کی اطلاع موصول ہونے پر دونوں افسران بذات خود تمام تر ضروری حفاظتی سامان اورمناسب نفری کے ہمراہ موقع پر پہنچیں گے اور ساتھ ہی ریسکیو ون فائیو ڈیسک پر موجود اینٹی لینڈ گریبنگ سکواڈ کا عملہ بھی فوری حرکت میں آتے ہوئے موقع پر موجود افسران کو رپورٹ کرے گا اور ان کے احکامات کے مطابق تعمیل کرے گا، وقوعہ پر موجود ایس ڈی پی او قبضہ سے متعلق ابتدائی انکوائری موقع پر ہی مکمل کرکے اس گروپ میں ملوث افراد کے خلاف قانونی کارروائی کا حکم دیں گے اور مسلح افراد کو حراست میں لیتے ہوئے اسلحہ و ایمونیشن کو قبضہ پولیس میں لیا جائے گا اس بات کو یقینی بنائیں گے کہ متاثرہ شخص کوکوئی نقصان نہ پہنچے اس کے علاوہ قبضہ کی کوشش میں ملوث گروپ کے تمام مسلح و غیر مسلح اشخاص کو برائے قانونی کاروائی بحفاظت تھانہ منتقل کیا جائے گا اورساتھ ہی متاثرہ فریق کو بھی تھانہ میں پہنچنے کی تاکید کریں گے اگر دونوں فریقین کے درمیان انسدادی کارروائی کرنا مقصود ہوتو اس کا فیصلہ بھی ایس ڈی پی او ہی کریں گے،قبضہ گروپ سے برآمد شدہ اسلحہ کی تصدیق کروائی جائے گی غیر قانونی اسلحہ کے بارے میں اسلحہ آرڈ ینینس کی تحت قانونی کارروائی عمل میں لائی جائے گی۔ایس او پی کے مطابق ریسکیو ون فائیو پر ایک خصوصی ڈیسک قائم کیا گیا ہے جس پر تعینات عملہ صرف قبضہ مافیا کے متعلق شکایات موصول ہونے پر فوری طور پر متعلقہ ایس ڈی پی او،ایس ایچ اوز کو اطلاع فراہم کرنے کا پابند ہو گا اس سلسلے میں ملنے والی تمام شکایات کا ریکارڈ مرتب کرکے محفوظ رکھے گا۔ ایس او پی کے مطابق متعلقہ ایس ڈی پی او ز قبضہ مافیا کے خلاف کی گئی قانونی کاروائیوں کی ہفتہ وار، پندرہ روزہ، ماہانہ اور سالانہ ڈائری مرتب کرکے زونل ایس پیز کی وساطت سے ایس ایس پی آپریشنزکو بھجوائیں گے، ان تمام رپورٹس کو جاری شدہ پرفارمہ کے مطابق ڈائری مرتب کرکے ڈی آئی جی آپریشنز اور سنٹرل پولیس آفس ارسال کرنے کے پابند ہوں گے اس کے علاوہ متنازعہ معاملات کے زمرے میں آنے والی زمین کی ملکیت کے تمام تنازعات فریقین کی مرضی سے مصالحتی کمیٹیوں کو بھجوائے جائیں، یا پھر فریقین دیوانی /محکمہ مال کی عدالت میں اپنے حقوق کا دفاع کریں گے یاد رکھیں ان معاملات میں پولیس کسی بھی شخص کو اراضی کی ملکیت دینے کی مجاز نہیں ایس او پی جاری کرنے کا مقصد قبضہ مافیا کی مبینہ کاروائیوں سے عام شہریوں کی حفاظت اوریہ واضع کرنا ہے کہ ایسی صورتحال میں شہری اپنی مدد کے لئے کسے اور کیسے رپورٹ کریں گے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں